گوا میں ایس سی او کی وزارت خارجہ کی میٹنگ خطے کو درپیش چیلنجوں پر توجہ مرکوز کرنے کے لیے

[ad_1]

شنگھائی تعاون تنظیم کے وزرائے خارجہ کا آج گوا میں اجلاس، پاکستان کے وزیر خارجہ سے دو طرفہ بات چیت کا کوئی اشارہ نہیں۔

وزرائے خارجہ کے اجلاس میں روس اور چین کے وزرائے خارجہ کی دوطرفہ بات چیت (فائل فوٹو)

گوا: شنگھائی تعاون تنظیم (SCO) کے وزرائے خارجہ آج سے دو دن کے لیے گوا میں میٹنگ کر رہے ہیں۔ ایس سی او کی جنرل میٹنگ کے علاوہ ہندوستان کے وزیر خارجہ ایس جے شنکر چین اور روس کے وزرائے خارجہ کے ساتھ ایک الگ دو طرفہ میٹنگ بھی کریں گے۔ روسی وزیر خارجہ سرگئی لاوروف میٹنگ میں شرکت کے لیے گوا پہنچ گئے ہیں۔ آج اور کل ہونے والے اس اجلاس میں شنگھائی سمٹ آرگنائزیشن کے تمام آٹھ کل وقتی رکن ممالک کے وزرائے خارجہ شرکت کر رہے ہیں۔ اس اجلاس میں شرکت کے لیے پاکستان کے وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری بھی گوا پہنچ رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

اجلاس میں علاقائی چیلنجز سے متعلق امور مرکز میں ہوں گے۔
ہندوستان شنگھائی تعاون تنظیم کے وزرائے خارجہ سطح کے دو روزہ اجلاس کی میزبانی کر رہا ہے۔ یہ ملاقات ایک ایسے وقت میں ہو رہی ہے جب روس اور مغربی ممالک یوکرین کی جنگ پر آمنے سامنے ہیں اور چین کے توسیع پسندانہ رویے پر بھی تحفظات کا اظہار کیا جا رہا ہے۔ اس اجلاس کی صدارت وزیر خارجہ ایس جے شنکر کریں گے، جس میں چینی وزیر خارجہ چن کانگ، روسی وزیر خارجہ سرگئی لاوروف، پاکستان کے وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری وغیرہ شامل ہوں گے۔ خیال کیا جا رہا ہے کہ ملاقات میں افغانستان کی تمام صورتحال پر بھی بات ہو سکتی ہے جس میں ان خدشات پر بھی غور کیا جا سکتا ہے کہ یہ ملک طالبان کے دور میں دہشت گردی کی آماجگاہ بن سکتا ہے۔ اس کے ساتھ تیزی سے ابھرتی ہوئی سیکیورٹی صورتحال پر بھی بات کی جا سکتی ہے۔

جے شنکر اور بھٹو زرداری کے درمیان ملاقات کے کوئی آثار نہیں۔
تاہم جے شنکر اور بلاول کے درمیان ایس سی او کانفرنس کے علاوہ کوئی دو طرفہ ملاقات ہو یا نہیں، اس معاملے پر خصوصی توجہ دی جائے گی۔ سربراہی اجلاس کی تیاریوں سے واقف لوگوں نے بتایا کہ جے شنکر چین، روس اور گروپ کے کچھ دیگر رکن ممالک کے اپنے ہم منصبوں کے ساتھ دو طرفہ بات چیت کریں گے۔ توقع ہے کہ چن اور لاوروف جمعرات کو بنولم کے ساحلی تفریحی مقام پر دو طرفہ بات چیت کریں گے، لیکن ابھی تک جے شنکر اور بھٹو زرداری کے درمیان ایسی ملاقات کا کوئی اشارہ نہیں ملا ہے۔ بھٹو زرداری دوپہر کے بعد پہنچ سکتے ہیں۔

نیٹو کے متبادل کے طور پر…
SCO کا قیام 2001 میں شنگھائی میں عمل میں آیا۔ SCO میں چین، بھارت، قازقستان، کرغزستان، روس، پاکستان، تاجکستان اور ازبکستان شامل ہیں۔ ہندوستان اس سال گروپ کی صدارت کر رہا ہے۔ ہندوستان اور پاکستان 2017 میں چین میں مقیم ایس سی او کے مستقل رکن بن گئے۔ ایس سی او تنظیم کے ممالک میں ہندوستان ایک اہم ملک کے طور پر ابھرا ہے۔ چین اور روس اس تنظیم کے اہم ممالک ہیں۔ اس تنظیم کو نیٹو کے متبادل کے طور پر بھی دیکھا جاتا ہے۔ ایسی صورت حال میں شنگھائی تعاون تنظیم کا رکن ہونے کے باوجود بھارت چار ممالک کی تنظیم کواڈ کا بھی رکن ہے۔ کواڈ میں ہندوستان کے علاوہ امریکہ، جاپان اور آسٹریلیا شامل ہیں۔ روس اور چین زبانی طور پر کواڈ کی مخالفت کر رہے ہیں۔

شنگھائی تعاون تنظیم کے اجلاس میں ان مسائل پر بھی بات ہو سکتی ہے۔
شنگھائی تعاون تنظیم کے اجلاس کی تیاری سے وابستہ ذرائع نے بتایا کہ تنظیم میں تعاون بڑھانے کے طریقوں پر بات چیت کے علاوہ کاروبار، سرمایہ کاری، رابطوں جیسے موضوعات کو نمایاں کیا جائے گا۔ سمجھا جاتا ہے کہ دہشت گردی کے چیلنجوں کے علاوہ یوکرین جنگ کے مضمرات پر بھی بات کی جا سکتی ہے۔ ہندوستان ایک ایسے وقت میں ایس سی او سربراہی اجلاس کی میزبانی کر رہا ہے جب مشرقی لداخ سرحدی تعطل کی وجہ سے چین کے ساتھ اس کے تعلقات کشیدہ ہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ملاقات میں وزیر خارجہ موجودہ جغرافیائی سیاسی بحران کے پس منظر میں خطے کو درپیش چیلنجز پر تبادلہ خیال کریں گے اور رکن ممالک کے درمیان دوطرفہ تعلقات پر بات چیت پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔

یہ بھی پڑھیں:-
بغیر اجازت بیڈ لگانے پر دہلی پولیس اور پہلوانوں کے درمیان شروع ہوا جھگڑا تصادم میں بدل گیا
چھتیس گڑھ: جگدل پور کے پولیس اسٹیشن میں کانگریس کارکنوں نے ہنگامہ آرائی، آئی پی ایس افسر پر نیتا جی کو تھپڑ مارنے کا الزام

[ad_2]
Source link

کے بارے میں alrazanetwork

یہ بھی چیک کریں

Gharib Nawaz

غریب نواز پر الزام تراشی: سازش پرانی اور تیاری پوری ہے !!

غریب نواز پر الزام تراشی: سازش پرانی اور تیاری پوری ہے !! غلام مصطفےٰ نعیمی …

Leave a Reply

واٹس ایپ پیغام بھیجیں۔
%d bloggers like this: